ن لیگ کے راہنما کیخلاف 13 سالہ معصوم بچی کے ریپ اور ابارشن کیبعد قتل پر عدالت کا اہم فیصلہ

ن لیگ کے راہنما کیخلاف 13 سالہ معصوم بچی کے ریپ اور ابارشن کیبعد قتل پر عدالت کا اہم فیصلہ

ن لیگ کے راہنما کیخلاف 13 سالہ معصوم بچی کے ریپ اور ابارشن کیبعد قتل پر عدالت ... 29 مئی 2018 (18:18) 6:18 PM, May 29, 2018

ٹیکسلا: منگل کو اجلاس میں عدالت نے ایک معصوم لڑکی کو قتل کرنے والے مقامی پاکستان مسلم لیگ (نواز) کے رہنما کو20 سال کی قید اور ایک 100،000 روپے جرمانہ کیا ہے۔سیشن جج احمد ارشاد محمود نےمجرم اور اس کے ساتھ ساتھ اس خاتون ڈاکٹرجس نے 13 سالہ معصوم بچی کا ابارشن کیا تھا۔مقامی عدالت نے ملزم کے دو بھائیوں کو ان کے خلاف ثبوت نہ ہونے کی بناء پر رہا کر دیا ہے۔

عدالت کے فیصلے سے پہلے ملزم کو عبوری ضمانت دی گئی تھی لیکن اس کے بعد گرفتاراسے کیا گیا ۔ اس سے قبل 2015 میں، مقتول کی ماں نے مقامی رہنما اور اس کے ساتھیوں کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا.مقتول کی ماں نے اس بات کا دعوی کیا تھا کہ قاتل (جو مقتول کے والد کا کزن بھی ہے)نے دو بھائیوں کیساتھ مل کر گن پوائنٹ پر بچی کیساتھ زیادتی کی۔گو اہ کیمطابق لڑکی کو ایک نجی کلینک میں خاتون ڈاکٹر سے اسقاط حمل پر مجبور کیاگيا۔

متعلقہ خبریں