غزوہ حنین کے بعدثقیف میں سے سب سے پہلے جو شخص اسلام کی غرض سے نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا وہ عروہ بن مسعود ثقفی تھا ۔ یہ اپنی قوم کا سردار تھا اور صلح حدیبیہ میں کفار کا وکیل بن کر آیا تھا ۔

غزوہ حنین کے بعدثقیف میں سے سب سے پہلے جو شخص اسلام کی غرض سے نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا وہ عروہ بن مسعود ثقفی تھا ۔ یہ اپنی قوم کا سردار تھا اور صلح حدیبیہ میں کفار کا وکیل بن کر آیا تھا ۔

غزوہ حنین کے بعدثقیف میں سے سب سے پہلے جو شخص اسلام کی غرض سے نبی پاک صلی اللہ ... 27 مئی 2018 (23:14) 11:14 PM, May 27, 2018

غزوہ حنین کے بعدثقیف میں سے سب سے پہلے جو شخص اسلام کی غرض سے نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا وہ عروہ بن مسعود ثقفی تھا ۔ یہ اپنی قوم کا سردار تھا اور صلح حدیبیہ میں کفار کا وکیل بن کر آیا تھا ۔ جنگ ہوازن و ثقیف کے بعد مدینہ منورہ حاضر ہوا اور اسلام قبول کیا ۔ عروہ کی اس وقت دس بیویاں تھیں ۔ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے چار رکھنے اور باقی کو فارغ کردینے کا حکم دیا ۔ چنانچہ اس نے ایسا ہی کیا ۔ واپس ہوتے وقت اس نے اپنی قوم کو تبلیغ کرنے کی اجازت چاہی ۔

آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم نے خدشات ظاہر فرمائے تو اس نے کہا قوم میرا بڑا احترام کرتی ہے اس لیے کوئی خدشہ نہیں چنانچہ انہوں نے واپس آکر تبلیغ شروع کردی ۔ ایک دن اپنے بالاخانے میں نماز ادا کررہے تھے کہ کسی شقی القلب نے تیر مارا جس سے وہ زخمی ہوگئے اور اسی وجہ سے شہید ہوگئے ۔ لیکن جو آواز انہوں نے قوم کے کانوں تک پہنچائی تھی وہ دلوں پر اثر کیے بغیر نہ رہی ۔ تھوڑا ہی عرصہ گزرا تھا کہ قوم نے اپنے چند سرداروں کو منتخب کیا اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں بھیجا تاکہ اسلام کی نسبت پوری واقفیت حاصل کریں ۔