ادا جعفری:نہ بہلاوا نہ سمجھوتا جدائی سی جدائی ہے......... اداؔ سوچو تو خوشبو کا سفر آساں نہیں ہوتا

ادا جعفری:نہ بہلاوا نہ سمجھوتا جدائی سی جدائی ہے......... اداؔ سوچو تو خوشبو کا سفر آساں نہیں ہوتا

ادا جعفری:نہ بہلاوا نہ سمجھوتا جدائی سی جدائی ہے......... اداؔ سوچو تو خوشبو کا ... 27 جون 2018 (12:13) 12:13 PM, June 27, 2018

اجالا دے چراغ رہ گزر آساں نہیں ہوتا

ہمیشہ ہو ستارا ہم سفر آساں نہیں ہوتا

جو آنکھوں اوٹ ہے چہرہ اسی کو دیکھ کر جینا

یہ سوچا تھا کہ آساں ہے مگر آساں نہیں ہوتا

بڑے تاباں بڑے روشن ستارے ٹوٹ جاتے ہیں

سحر کی راہ تکنا تا سحر آساں نہیں ہوتا

اندھیری کاسنی راتیں یہیں سے ہو کے گزریں گی

جلا رکھنا کوئی داغ جگر آساں نہیں ہوتا

کسی درد آشنا لمحے کے نقش پا سجا لینا

اکیلے گھر کو کہنا اپنا گھر آساں نہیں ہوتا

جو ٹپکے کاسۂ دل میں تو عالم ہی بدل جائے

وہ اک آنسو مگر اے چشم تر آساں نہیں ہوتا

گماں تو کیا یقیں بھی وسوسوں کی زد میں ہوتا ہے

سمجھنا سنگ در کو سنگ در آساں نہیں ہوتا

نہ بہلاوا نہ سمجھوتا جدائی سی جدائی ہے

ادا ؔ سوچو تو خوشبو کا سفر آساں نہیں ہوتا

متعلقہ خبریں