ٹکٹ تو انہوں نے مجھے دو دیے تھے میں نےواپس کر دیے پلیٹ میں رکھ کے شکریہ کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔پارٹی میں روز نظریہ تبدیل ہو جاتا ہے کہ۔۔۔۔۔ لیکن اب پارٹی میں دو نظریے آ گئے ہیں ایک نواز شریف کا ایک شہباز شریف کا تو بندہ ۔۔۔۔۔۔۔زعیم قادری

ٹکٹ تو انہوں نے مجھے دو دیے تھے میں نےواپس کر دیے پلیٹ میں رکھ کے شکریہ کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔پارٹی میں روز نظریہ تبدیل ہو جاتا ہے کہ۔۔۔۔۔ لیکن اب پارٹی میں دو نظریے آ گئے ہیں ایک نواز شریف کا ایک شہباز شریف کا تو بندہ ۔۔۔۔۔۔۔زعیم قادری

ٹکٹ تو انہوں نے مجھے دو دیے تھے میں نےواپس کر دیے پلیٹ میں رکھ کے شکریہ کے ... 26 جون 2018 (09:59) 9:59 AM, June 26, 2018

پروگرام "سوال یہ ہے"میں بات کرتے ہوئے زعیم قادری کا ن لیگ کو چھوڑنے اور ٹکٹوں کے متعلق کہنا تھا کہ :"ابھی بھی آپ کو کوئی شک ہے -فیصلے وہ بدلتےہیں جنہیں اپنا پتہ نہیں ہوتا مجھے اپنا پتہ ہے اور ٹکٹ تو انہوں نے مجھے دو دیے تھے میں نےواپس کر دیے پلیٹ میں رکھ کے شکریہ کے ساتھ مسئلہ صرف یہ نہیں ہے یہ بارہ سال کا قصہ ہے بات یہ ہے کہ جب بھی بات کرتا ہوں تاثر یہ ملتا ہے کہ آپ سوال بہت کرتے ہیں جو سوال نہیں کرتے ان کی بات کی بھی کوئی اہمیت نہیں ہے اس لیے کہ وہ سوال بھی نہیں کرتے اور پرائیویٹ کمپنی کے چیئر مین سے حکم لیتے ہیں -

اورجا کر کام کرتے ہیں کی بوائے کی حیثیت سے ,ٹائپسٹ کی حیثیت سے - تو میں نے بارہا کہا کہ میں نہیں کر سکتا میں چپ کرا دیا گیا تو تنظیم کی وجہ سے میں نہیں بول سکتا تھاایک نظریاتی کارکن تھا اور روز نظریے کو بکھرتا ہوا دیکھتا تھا تو اب بارہ برس کے بعد میرے اوپر وہ پوائنٹ آیا جو ہر کسی پہ آ جاتا ہے -پارٹی میں روز نظریہ تبدیل ہو جاتا ہے کہ آج یہ نظریہ ہے آج اس پر کام کرو لیکن اب پارٹی میں دو نظریے آ گئے ہیں ایک نواز شریف کا ایک شہباز شریف کا تو بندہ کس کے نظریے کی پیروی کرے "

متعلقہ خبریں