پاکستان کو تجارتی خسارے سے بچنے کیلئے ایک بار پھر چین کی ضرورت

پاکستان کو تجارتی خسارے سے بچنے کیلئے ایک بار پھر چین کی ضرورت

پاکستان کو تجارتی خسارے سے بچنے کیلئے ایک بار پھر چین کی ضرورت 24 مئی 2018 (02:48) 2:48 AM, May 24, 2018

پاکستان کو ایک بار پھر مشکل وقت میں چین کی ضرور ت پڑ گئی ہے۔

فائنانشل ٹائمز (ایف ٹی ) نے بدھ کو رپورٹ کیا کہ پاکستان ایک بار پھر غیر ملکی کرنسی بحران سے بچنے میں مدد کے لئے چین کے بینکوں سے 1 ارب ڈالر قرض لے گا۔

ایک انٹرویو میں گورنر اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) گورنر طارق باجو نے بیجنگ بیکڈ بینکوں کی جانب سے جاری کئے گئے قرضوں کو اچھی قیمتوں پر حاصل کرنے کی تصدیق کی ہے۔

فائنانشل ٹائمز (ایف ٹی ) کی رپورٹ میں لکھا تھا کہ " معائدے دونوں ممالک کے درمیان مالی، سیاسی اور فوجی تعلقات کو مضبوط بنائیں گے."

قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ "چین کے تجارتی بینکوں کی مساوات سے آگاہی ہے."

پاکستان کے غیر ملکی کرنسی کے ذخائر گزشتہ سال اپریل میں 18.1 ارب ڈالر سے زائد ہو چکے ہیں اس سال مئی میں 10.8 بلین ڈالر ہو چکے ہیں۔مضمون کے مطابق، پاکستانی اہلکار بھی امید رکھتے ہیں کہ چین کے بینکوں سے قرضے لینا پاکستان کو بین الاقوامی ادارے کے فنڈ فنڈ (آئی ایم ایف) بھی بچائے گا۔

دسمبر 1988 کے بعد سے ، پاکستان نے آئی ایم ایف کے ساتھ 9 الگ الگ میٹنگز کی ہیں - ان میں سے تین ڈبل پروگرام تھے. اس کا مطلب یہ ہے کہ گزشتہ 28 سالوں میں پاکستان میں 12 بین الاقوامی امور پروگرام ہیں. ان میں سے صرف چار کو 2000 اور 2010 می کامیابی سے مکمل کیا گیا تھا؛ باقی 1990 کے دہائی میں ادھورے چھوڑ دئے گئے

متعلقہ خبریں