رب ہم سنائیں کسے مدعا دل‎

رب ہم سنائیں کسے مدعا دل‎

رب ہم سنائیں کسے مدعا دل‎ 18 جون 2018 (20:16) 8:16 PM, June 18, 2018

ربّ سُنائیں ہم کسےاب مُدعائے دل

کوئی نہیں جہان میں حاجت روائے دل

کیا کہیے بحرِ شوق میں اب ماجرائے دل

دل ہے سفینہ اور وہ ہیں ناخدائے دل

آیئنہ حیات کی تکمیل کے لیے

لازم ہے کائنات میں صِدق و صفائے دل

دل اور درد دونوں میں اک ربطِ خاصہ 

دل آشنائے درد ہے ، درد آشنائے دل

ہر ٹِیس جس کی تیری طرف مُلتَفِت کرے

یا ربّ ! وہ درد چاہیے مجھ کو برائے دل

دنیائے دل کا حال نہ پوچھو فراق میں

مصروفِ انتظار ہیں صبح و مسائے دل

صد ہا اٹھائیں دل کی بدولت صعوبتیں

دیکھو نصؔیر اور ابھی کیا کیا دکھائے دل

متعلقہ خبریں