نیٹو اتحاد کے رکن دونوں ممالک اختلافات پر بآسانی قابو پاسکتے ہیں تاہم امریکا کی موجودہ روش کی روشنی میں یہ ممکن نہیں۔ترکی

نیٹو اتحاد کے رکن دونوں ممالک اختلافات پر بآسانی قابو پاسکتے ہیں تاہم امریکا کی موجودہ روش کی روشنی میں یہ ممکن نہیں۔ترکی

نیٹو اتحاد کے رکن دونوں ممالک اختلافات پر بآسانی قابو پاسکتے ہیں تاہم امریکا ... 17 اگست 2018 (12:33) 12:33 PM, August 17, 2018

ترکی کے وزیر خارجہ مولود چاوش اوگلو کا کہنا ہے کہ اُن کا ملک امریکا کے ساتھ تعلقات میں مسائل کا خواہش مند نہیں ہے۔ جمعرات کے روز ایک بیان میں انہوں نے باور کرایا کہ نیٹو اتحاد کے رکن دونوں ممالک اختلافات پر بآسانی قابو پاسکتے ہیں تاہم امریکا کی موجودہ روش کی روشنی میں یہ ممکن نہیں۔

انقرہ اور واشنگٹن کے بیچ شدید اختلاف نے جنم لیا جس میں دونوں ملکوں کی بعض درآمدات پر ٹیکسوں میں اضافے کا تبادلہ اور ترکی میں کرنسی کا بحران بھی شامل ہو گیا۔دوسری جانب امریکی وزیر خزانہ اسٹیفن منوچن نے جمعرات کے روز دھمکی دی ہے کہ اگر ترکی نے امریکی پادری اینڈرو برینسن کو جلد رہا نہ کیا تو اُس پر مزید پابندیاں عائد کی جائیں گی۔وہائٹ ہاؤس میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ "ہم نے اُن کی حکومت کے کئی وزراء پر پابندیاں عائد کر دی ہیں۔ اگر اںہوں نے اُسے (پادری) کو جلد از جلد رہا نہ کیا تو ہم اضافی اقدامات کا ارادہ رکھتے ہیں"۔

متعلقہ خبریں