حضورکريم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذمہ ايک يہودی قرض کا تھا ، اس نے آ کر اپنا قرض مانگا

حضورکريم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذمہ ايک يہودی قرض کا تھا ، اس نے آ کر اپنا قرض مانگا

حضورکريم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذمہ ايک يہودی قرض کا تھا ، اس نے آ کر اپنا ... 16 مئی 2018 (15:41) 3:41 PM, May 16, 2018

حضورکريم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذمہ ايک يہودی قرض کا تھا ، اس نے آ کر اپنا قرض مانگا

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ميرے پاس کچھ نہيں ہے کچھ مہلت دو يہودی نے کہا جب تک آپ قرض نہيں ادا کريں گۓ ميں آپ کو نہيں چھوڑوں گا ۔

نبی کريم صلی اللہ علیہ وسلم فرمایا ٹھيک ہے تمہارا اختیار ہے اور اسکے ساتھ بيٹھ گۓ۔ اور ظہر سے ليکر اگلے دن کی صبح تک کی نمازيں يہيں ادا فرمایں ۔ صحابہ کرام يہ سب ديکھ کر رنجيدہ اور غضب ناک ہو رہے تھے اور يھودی کو ڈرا دمکھا رہے تھے کہ وہ نبی کريم صلی اللہ علیہ وسلم کو چھوڑ دے۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے بھانپ ليا اور کہا کيا کرتے ہو

"مجھے ميرے رب نے منع کيا ہے کہ ميں معاہد وغيرہ پر ظلم کروں ۔ يہودی يہ ماجرا ديکھ اور سن رہا تھا ۔ صبح ہوتے ہی اس نے اسلام قبول کر ليا ، اور کہا ميں نے اپنا آدھا مال اللہ کے راستے ميں دے ديا ۔۔

متعلقہ خبریں