ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے امریکا کی الیکٹرانک مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے امریکا کی الیکٹرانک مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے امریکا کی الیکٹرانک مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان ... 15 اگست 2018 (12:37) 12:37 PM, August 15, 2018

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے امریکا کی الیکٹرانک مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا ہے۔انھوں نے یہ فیصلہ امریکا کی جانب سے ترکی کے خلاف اقتصادی پابندیوں کے نفاذ اور اس کی اسٹیل اور ایلومینیم کی مصنوعات پر ٹیرف میں اضافے کے رد عمل میں کیا ہے۔

صدر ایردوآن نے منگل کو ایک نشری تقریر میں کہا کہ ترکی اپنی معیشت سے متعلق ضروری اقدامات کررہاہے۔امریکا سے تنازع میں ترک کرنسی لیرہ کی قدر میں مسلسل کمی ہورہی ہے لیکن اہم بات یہ ہے کہ ایک مضبوط سیاسی موقف اختیار کیا جائے۔

انھوں نے کہا:’’ اگر امریکا کا آئی فون ہے تو دوسری جانب سام سنگ بھی ہے‘‘۔وہ امریکی کمپنی ایپل کے ساختہ آئی فون اور جنوبی کوریا کے برانڈ اسمارٹ فون کا حوالہ دے رہے تھے۔ترک صدر نے کہا:’’ہمارے پاس ہمارا اپنا وینس اور ویسٹل ہے‘‘۔ انھوں نے تقریر میں ترکی کے اپنے ساختہ الیکٹرانک برانڈز کا بھی ذکر کیاہے۔ترکی اور امریکا کے درمیان دوطرفہ تعلقات ایک عیسائی پادری اینڈریو برونسن کو دہشت گردی کے الزامات میں زیر حراست رکھنے پر شدید بحران کا شکار ہوچکے ہیں ۔امریکا نے اس پر ترکی کے خلاف پابندیاں عاید کردی ہیں جن کے نتیجے میں لیرہ کی ڈالر کے مقابلے میں قدرمیں حالیہ ہفتوں کے دوران میں 20 فی صد تک کمی واقع ہو چکی ہے۔صدر رجب طیب ایردوآن کا کہنا تھا کہ ’’ترکی کو ایک ’’ معاشی حملے‘‘ اور ایک بڑے اور گہرے آپریشن کا سامنا ہے لیکن وہ اس کے باوجود امریکا کو کوئی رعایتیں دینے کو تیار نہیں ہے‘‘۔انھوں نے امریکا کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ’’ انھوں نے معیشت کو ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کرنے میں کسی ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کیا ہے۔ آپ کیا کرنا چاہتے ہیں؟ اور کیا حاصل کرنا چاہتے ہیں ؟‘‘انھوں نے اعتراف کیا ہے کہ ترکی کی معیشت کو مسائل کا سامنا ہے،ان میں بڑھتا ہوا کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ اور افراطِ زر کی شرح میں اضافہ ہے، یہ شرح 16 فی صد تک بڑھ چکی ہے لیکن ان کا کہنا تھا کہ ’’ اللہ کا شکر ہے کہ ہماری معیشت گھڑی کی طرح کام کررہی ہے‘‘۔

متعلقہ خبریں