شفاف انتحابات کیلئے اہم ذمہ داری پاک فوج کیحوالے کر دی گئی۔

شفاف انتحابات کیلئے اہم ذمہ داری پاک فوج کیحوالے کر دی گئی۔

شفاف انتحابات کیلئے اہم ذمہ داری پاک فوج کیحوالے کر دی گئی۔ 14 جون 2018 (14:46) 2:46 PM, June 14, 2018

اسلام آباد: پاکستان مسلم لیگ ن کے بڑ ے مطالبہ کو الیکشن کمیشن نے مسترد کردیا ہے اور فوج کوپولنگ سٹیشنز کے اندر تعینات کرنے کا بھی فیصلہ کر لیا گیا ہے۔ الیکشن کمیشن کے ذرائع کے مطابق الیکشن 2018 فوج کی نگرانی میں کروائے جائیں گے۔ بیلٹ پیپرز کی چھپائی اور ترسیل بھی فوج کی نگرانی میں ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق چیف الیکشن کمشنر سردار رضا کی زیرصدارت اعلیٰ سطح کا اجلاس ہوا جس میں چاروں صوبائی چیف سیکریٹریز اور انسپکٹر جنرل پولیس بھی شریک ہوئے۔اجلاس میں الیکشن کے لیے فول پروف سیکیورٹی انتظامات کا فیصلہ کیا گیا۔ ذرائع الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ الیکشن فوج کی نگرانی میں کرائے جائیں گے جبکہ رینجرز کی خدمات بھی حاصل کی جائیں گی۔

الیکشن کمیشن کے مطابق عام انتخابات کی سکیورٹی فوج کے سپرد ہو گی، بیلٹ پیپرز کی چھپائی اور ترسیل فوج کی زیر نگرانی ہوگی۔ الیکشن کمیشن نے سیکریٹری دفاع کو ہدایات جاری کر دیں۔ذرائع کے مطابق کوئیک رسپانس فورس کے لیے بھی فوج سے رابطے کیےجارہے ہیں۔ اجلاس میں پولنگ اسٹیشنز کے اندر اور باہر فوج اور رینجرز کی تعیناتی کی تجویز پیش کی گئی۔

اجلاس میں پولنگ اسٹیشنز، عملے، سیاسی رہنماؤں اور عوامی اجتماعات کا سیکیورٹی پلان تیار کرلیا گیا۔ حساس پولنگ اسٹیشنز میں سی سی ٹی وی کیمروں کی نتصیب یقینی بنانے کا فیصلہ جبکہ مانیٹرنگ ٹیموں کی سیکیورٹی کے لیے بھی انتظامات کی منصوبہ بندی کی گئی۔

حساس ترین پولنگ سٹیشنز پر تین سے چار سی سی ٹی وی کیمرے لگائے جائیں گے جبکہ صوبائی الیکشن کمشنرز نے پولنگ سٹیشنزکے متعلق رپورٹ بھی الیکشن کمیشن کے سامنے پیش کی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ حساس پولنگ اسٹیشنز پر سیکیورٹی کے خصوصی اقدامات ہوں گے۔ صوبائی حکومتوں نے ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کروائی ہے جبکہ صوبوں سے حساس پولنگ اسٹیشنز کی حتمی فہرست بھی طلب کرلی گئی ہے۔

یاد رہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے 2018 کے عام انتخابات بھی ماتحت عدلیہ کی زیر نگرانی کرانے کا فیصلہ کیا تھا۔ الیکشن کمیشن کے اعلامیے میں کہا گیا کہ 2018 کے عام انتخابات میں ڈسٹرکٹ ریٹرننگ افسران کی تعیناتی ماتحت عدلیہ کے جوڈیشل افسران سے کی جائے گی۔

یہ اعلان صرف ایک دن قبل سامنے آیا جب مسلم ليگ ن حکومت کی مدت 31 مئی کو ختم ہوجائے گی. الیکشن کمیشن کے مطابق، 86436 پولنگ سٹیشن قائم کئے جائیں گے، پنجاب میں 48667 اور سندھ میں 18،647 شامل ہیں.

وفاقی انتظامیہ قبائلی علاقہ جات اور خیبر پختون خواہ میں 14655 پولنگ سٹیشن قائم کیے جائیں گے اور 4،467 بلوچستان میں ہوں گے.

الیکشن کمیشن کی جانب سے عام انتخابات کی تیاریاں جاری ہیں. الیکشن کمیشن آف پاکستان نے عام انتخابات پر اخراجات کا ابتدائی تخمینہ لگالیا ، جس کے مطابق انتخابات میں 20ارب سے زائد لاگت آنے کا امکان ہے۔

الیکشن کمیشن نے انتخابی فہرستوں کو بھی حتمی شکل دے دی ہے، جن کے مطابق آئندہ انتخابات میں 10 کروڑ سے زائد افراد حق رائے دہی استعمال کریں گے.

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی ویب سائٹ کے اعداد و شمار کے مطابق، مجموعی طور پر 59.2 ملین مرد اور 46.7 ملین عورتوں کو چھ صوبوں میں انتخابی رول تشکیل دیا گیا ہے جو کہ 200 ملین سے زیادہ آبادی بنتی ہے ۔سرکاری اعداد و شمار کے مطابق، 18 اور 25 کی عمر کے درمیان 17.44 ملین ووٹرز، 26 اور 35 کے درمیان 28.99 ملین، جبکہ 22.48 ملین 36 اور 45 کے درمیان ہیں.لیکن نوجوانوں کے لحاظ سے دنیا کے چھٹے سب سے زیادہ آبادی والے ملک کے مستقبل کافیصلہ کرنے میں نوجوان اہم کردار ادا کریں گے۔

متعلقہ خبریں