الیکشن کمیشن نے حافظ سعید کی امیدوں پر پانی پھیر دیا

الیکشن کمیشن نے حافظ سعید کی امیدوں پر پانی پھیر دیا

الیکشن کمیشن نے حافظ سعید کی امیدوں پر پانی پھیر دیا 14 جون 2018 (11:56) 11:56 AM, June 14, 2018

الیکشن کمیشن نے حافظ سعید سے منسلک جماعت ملی مسلم لیگ کی بطور سیاسی جماعت رجسٹریشن سے متعلق درخواست مسترد کردی۔ممبر سندھ عبدالغفارسومرو کی سربراہی میں الیکشن کمیشن کی 4 رکنی کمشین نے ملی مسلم لیگ کی بطور سیاسی جماعت رجسٹریشن کیس کی سماعت کی۔سماعت کے دوران وکیل ملی مسلم لیگ کا کہنا تھا کہ کوئی شہری سروس آف پاکستان میں نہیں ہے تو وہ سیاسی جماعت بنا سکتا ہے، حکومت کسی بنیاد پر سیاسی جماعت کی رجسٹریشن کی مخالفت نہیں کرسکتی ، پیشگی کوئی نہیں کہہ سکتا کہ مستقبل میں کسی سیاسی جماعت کے کالعدم تنظیم سے تعلقات ہوں گے۔وکیل نے کہا کہ ملی مسلم لیگ کے سربراہ سیف اللہ خالد کا حافظ سعید سے کوئی تعلق نہیں ، مسلم لیگ ن کو ہماری جماعت سے ذاتی عناد ہے، سربراہ ن لیگ چند ممالک سےقریبی تعلقات کے باعث ہماری جماعت کے مخالف تھے، بھارت نہیں چاہتا کہ ملی مسلم لیگ قائم اور رجسٹرڈ ہو ۔

یاد رہیکہ ملی مسلم لیگ بھی میدان میں آ گئی، ملی مسلم لیگ کی طرف سے صوبائی نشستوں کیلئے 6 امیدوارالیکشن میں حصہ لیں گے۔ ملی مسلم لیگ نے تحریک اللہ اکبرکے ساتھ اتحاد کرکے این اے 125کا معرکہ ایک بار بھی سر کرنے کی تیار ی کرلی ہے۔ایک ذرائع نے بتایا ہے کہ ضمنی الیکشن 2017ء میں مسلم لیگ ن کی امیدواربیگم کلثوم نواز کے مقابلے میں 40سے زائد امیدوارکھڑے ہوئے تھے۔ جن میں ملی مسلم لیگ کے محمد یعقوب شیخ بھی شامل تھے۔لیکن عام انتخابات 2018ء میں ملی مسلم لیگ نے تحریک اللہ اکبر کے ساتھ ملکر الیکشن لڑنے کا فیصلہ کرلیا ہے 2018ء الیکشن میں اپنے امیدوار کو کھڑا کریں گے۔ اسی طرح ملی مسلم لیگ نے راولپنڈی کی صوبائی نشستوں پر بھی اپنے مضبوط امیدوار الیکشن میں کھڑے کردیے ہیں۔ ملی مسلم لیگ کے پی پی 14سے رانا عبدالرحمان،پی پی 15سے ملک شہزاد یاسین، پی پی 16سے افتخار شاہ،پی پی 18سے زاہد خان،اور پنجاب اسمبلی کے حلقہ پی پی 19سے چوہدری عبدالقدوس کو انتخابی میدان میں اتارا جائے گا۔

متعلقہ خبریں