مبینہ میاں بیوی حمزہ شہباز اور عائشہ احد کے درمیان صلح ہوگئی۔لیکن اصل راز اب بھی نہ کھل سکا۔

مبینہ میاں بیوی حمزہ شہباز اور عائشہ احد کے درمیان صلح ہوگئی۔لیکن اصل راز اب بھی نہ کھل سکا۔

مبینہ میاں بیوی حمزہ شہباز اور عائشہ احد کے درمیان صلح ہوگئی۔لیکن اصل راز ... 12 جون 2018 (16:11) 4:11 PM, June 12, 2018

چیف جسٹس آف پاکستان کی سربراہی میں تین رُکنی بینچ نے جب مُبینہ تشدد کہ سماعت شروع کی اور حمزہ شہباز عدالت میں حاضر ہوئے . اس دوران یہ معاہدہ طے پایا تھا کہ اگر دونوں فریقین چیمبر میں حاضر ہوں اور چیف جسٹس ایک بُزرگ کی حیثیت سے اُن کے درمیان صُلح کروا سکتے ہیں .چیف جسٹس کی سربراہی می عدالت کے چیمبر میں ان کے کیس کہ سماعت ہوئی .اس دوران یہ معاہدہ طے ہوا کہ آج کے بعد عائشہ احد اور حمزہ شہباز ایک دوسرے کے خلاف کوئی بیان میڈیا کے سامنے نہیں دیں گے . عائشہ احداور حمزہ شہباز سے نکاح کیا ہے یا نہیں, اس بارے میں بھی کوئی بات نہیں کی جائیگی اور تمام معاملات چیف جسٹس سربراہی میں عدالت کے چیمبر کے اندر ہی طے پائے اور چیف جسٹس نے واضح احکامات جاری کر دئیے ہیں کہ اس بارے میں کوئی بات نہیں کی جائیگی . جب مقدمے کی سماعت باہر شروع کی گئی تھی تو عائشہ احد نے کئی بار کہا کہ اُن کے پاس تمام ثبوت موجود ہیں کہ حمزہ شہباز کی اہلیہ ہیں اور ان پاس تصویریں اور آڈیو اور ویڈیو بھی موجود ہے . اس کے بعد ایک گھنٹہ چیمبر میں سماعت چلتی رہی جس کی تفصیلات سامنے لانے سے چیف جسٹس نے منع کیا ہے اور اس حوالے سے خبریں بھی کسی ٹی وی چینل پر نہیں چلائیں جائیں گی .

اس سے پہلے چیف جسٹس نے ایک موقعے پر حمزہ شہباز سے کہا تھا کہ اگر وہ کیس میں تعاون نہیں کریں گے اور عدالت میں اس بات کا اعتراف نہیں کریں گے کہ عائشہ احد اُن کی اہلیہ ہیں یا نہیں , تو اُن کے خلاف جے آئی ٹی تشکیل دے دی جائیگی جس کے ارکان پنچاب اسمبلی کے ارکان نہیں ہوں گے بلکہ باہر کے لوگ ہوں گے اور آئی ایس آئی سمیت تمام ایجنسیاں شامل ہوں گی تا کہ آذادانہ رپورٹ تیار کی جا سکے اور ان رپورٹس کی روشنی میں عدالت فیصلہ سُنائے گی.

آج کی سماعت کے دوران دونوں فریقین کے درمیان چیف جسٹس کی موجودگی میں راضی نامہ ہو گیا ہے کہ عائشہ احد اور حمزہ شہباز کیس واپس لے لیں گے اور تمام مُتنازعہ معاملات طے پا گئے ہیں .

متعلقہ خبریں