سا غر صد یقی:سُنو! اے عِشق میں توقیرِ ہستی ڈھونڈنے والو ........یہ وہ منزل ہے جس منزل پہ انساں لڑکھڑاتے ہیں

سا غر صد یقی:سُنو! اے عِشق میں توقیرِ ہستی ڈھونڈنے والو ........یہ وہ منزل ہے جس منزل پہ انساں لڑکھڑاتے ہیں

سا غر صد یقی:سُنو! اے عِشق میں توقیرِ ہستی ڈھونڈنے والو ........یہ وہ منزل ہے جس ... 12 جولائی 2018 (00:20) 12:20 AM, July 12, 2018

تخیّل سے گزرتے ہیں تو نغمے چونک اُٹھتے ہیں

تصّور میں بہ انداز بہاراں لڑکھڑاتے ہیں

قرارِ دین و دُنیا آپ کی بانہوں میں لرزاں ہے

سہارے دیکھ کر زُلفِ پریشاں لڑکھڑاتے ہیں

تیری آنکھوں کے افسانے بھی پیمانے ہیں مستی کے

بنامِ ہوش مدہوشی کے عُنواں لڑکھڑاتے ہیں

سُنو ! اے عِشق میں توقیرِ ہستی ڈھونڈنے والو

یہ وہ منزل ہے جس منزل پہ انساں لڑکھڑاتے ہیں

تمہارا نام لیتا ہُوں فضائیں رقص کرتی ہیں

تمہاری یاد آتی ہے تو ارماں لڑکھڑاتے ہیں

کہیں سے میکدے میں اس طرح کے آدمی لاؤ

کہ جن کی جنبشِ اَبرو سے ایماں لڑکھڑاتے ہیں

یقینا حشر کی تقریب کے لمحات آپہنچے

قدمِ ساغرؔ قریب کوئے جاناں لڑکھڑاتے ہیں

متعلقہ خبریں