ان لوگوں نے صرف میری بیٹی کو سزا نہیں سنائی بلکہ پوری قوم کی بیٹیوں کو توہین کی ہے،نواز شریف

ان لوگوں نے صرف میری بیٹی کو سزا نہیں سنائی بلکہ پوری قوم کی بیٹیوں کو توہین کی ہے،نواز شریف

ان لوگوں نے صرف میری بیٹی کو سزا نہیں سنائی بلکہ پوری قوم کی بیٹیوں کو توہین ... 11 جولائی 2018 (20:49) 8:49 PM, July 11, 2018

لندن میں میڈیا سے گفتگو میں نواز شریف کا کہنا تھا کہ اس مشکل وقت پر اپنی قوم کو تنہا نہیں چھوڑ سکتا، مجھے جس عدالت نے سزا سنائی ان عدالتوں میں 40 اور ریفرنسز بھی پڑے ہیں، کیا ان ریفرنسز کو بھی کوئی سنے گا، انہوں نے کہا کہ جیل نظر بھی آرہی ہے لیکن پھر بھی جیل جا رہا ہوں، میں اور مریم اپنے وطن واپس جا رہے ہیں ،عوام نے حقیقی انصاف کا چہرہ ایک دفعہ پھر دیکھ لیا ہے، مجھے، میری بیٹی اور داماد کو سزائیں سنائی گئیں ہیں۔

تفصیلات کے مطابق لندن میں مسلم لیگ ن کے ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نواز شریف کا کہنا تھا کہ اب جیل جانا پڑے یا پھانسی پر چڑھایا جائے، لیکن اب ان کے قدم نہیں رکیں گے۔ س مشکل وقت پر اپنی قوم کو تنہا نہیں چھوڑ سکتا، جیل کی کوٹھری اپنے سامنے دیکھ کر بھی پاکستان واپس جارہا ہوں۔ نواز شریف کا کہنا ہے کہ ووٹ کو عزت دو کا وعدہ پورا کرنے کیلئے پاکستان واپس جارہا ہوں۔

مسلم لیگ (ن) کے قائد نے کہا کہ ہمیں سزائیں دینے کا فیصلہ کہیں اور ہوچکا تھا جسے پانچ بار تبدیل کرکے سنایا گیا، ان لوگوں نے صرف میری بیٹی کو سزا نہیں سنائی بلکہ پوری قوم کی بیٹیوں کو توہین کی ہے، مجھے تو سزائیں قبول ہیں لیکن مریم نواز کا کیا قصور تھا ، یہ کونسی ممبر قومی و صوبائی اسمبلی یا پھر سینیٹ کی ممبر تھی جبکہ اس کے پاس تو کوئی عہدہ بھی نہیں تھا پھر بھی اسے 8 سال کی سزا سنادی گئی۔

کون ہے جو مجھے راستے سے ہٹانا چاہتا ہے۔ کب تک یہ دہرا معیار روا رکھا جائے گا۔ نواز شریف نے مزید کہا ہے کہ ان کی بیٹی کو کس بات کی سزا سی جا رہی ہے۔ ان کی بیٹی مریم نواز کسی عوامی یا سرکاری عہدے پر براجمان نہیں رہی، لیکن پھر بھی اسے 8 سال جیل کی سزا دے دی گئی۔ نواز شریف کہتے ہیں کہ ہے کوئی دوسرا پاکستانی جس نے تین نسلوں کا حساب دیا ہو۔ نواز شریف کو چاہے جیل میں ڈالو یا پھانسی پر لٹکاو، لیکن ان سوالات کا جواب ضرور دیا جائے۔ اب پاکستان کی عوام خود ان سوالات کا جواب لے گی۔

میرے خلاف کچھ نہ ملا تو اقا مہ سامنے رکھ دیا، کچھ لوگ من پسند فیصلوں کی وجہ سے ملک کی تقدیر کو خطرے میں ڈال رہے ہیں، لاڈلوں کو کسی اور ترازو میں اور ہمیں کسی اور ترازو میں ڈالا جا رہا ہے۔ ووٹ کو عزت دو کا نعرہ پورا کرنے پاکستان جا رہا ہوں۔ نواز شریف سے دشمنی کو کیوں ملک دشمنی میں بدل دیا ہے، میرا سینہ چھلنی اور دل زخمی ہے۔ پھانسی چڑھانا ہے تو چڑھا دو اب میں چپ نہیں رہونگا۔ پاکستان کے عوام میرے تمام سوالات کا جواب لینگے۔ اقتدار کیلئے اپنے ضمیر کا گلا نہیں گھونٹ سکتا، مجھے جیل میں ڈالنے کا فیصلہ کہیں اور سے آیا تھا۔ ادارے مضبوط ہونگے تو پاکستان مضبوط ہوگا۔

متعلقہ خبریں