سا غر صد یقی:گیت کی ضرب سے بھی اے ساغرؔ ............ ٹوٹ جاتے ہیں تار چپ ہو جا

سا غر صد یقی:گیت کی ضرب سے بھی اے ساغرؔ ............ ٹوٹ جاتے ہیں تار چپ ہو جا

سا غر صد یقی:گیت کی ضرب سے بھی اے ساغرؔ ............ ٹوٹ جاتے ہیں تار چپ ہو جا 08 جولائی 2018 (21:46) 9:46 PM, July 08, 2018

اے دل بے قرار چپ ہو جا

جا چکی ہے بہار چپ ہو جا

اب نہ آئیں گے روٹھنے والے

دیدۂ اشک بار چپ ہو جا

جا چکا کاروان لالہ و گل

اڑ رہا ہے غبار چپ ہو جا

چھوٹ جاتی ہے پھول سے خوشبو

روٹھ جاتے ہیں یار چپ ہو جا

ہم فقیروں کا اس زمانے میں

کون ہے غم گسار چپ ہو جا

حادثوں کی نہ آنکھ کھل جائے

حسرت سوگوار چپ ہو جا

گیت کی ضرب سے بھی اے ساغرؔ

ٹوٹ جاتے ہیں تار چپ ہو جا

متعلقہ خبریں