یہ بندہ فاٹا میں جا سکتا ہے اس کے بعد افغانستان جا سکتا ہے اور پھر افغانستان سے لندن جا سکتا ہے یہ کوئی عجوبہ نہیں ہے سچ مچ میں لوگ بھاگ جاتے ہیں

یہ بندہ فاٹا میں جا سکتا ہے اس کے بعد افغانستان جا سکتا ہے اور پھر افغانستان سے لندن جا سکتا ہے یہ کوئی عجوبہ نہیں ہے سچ مچ میں لوگ بھاگ جاتے ہیں

یہ بندہ فاٹا میں جا سکتا ہے اس کے بعد افغانستان جا سکتا ہے اور پھر افغانستان ... 08 جولائی 2018 (12:25) 12:25 PM, July 08, 2018

سینئر تجزیہ کار ہمایوں گوہر نے پروگرام" سوال یہ ہے " میں کیپٹن صفدر کے بار ے میں بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ :"کوئی بھی مجرم ایسا نہیں جو اپنی گرفتاری کا سن کر انڈر گراؤنڈ نہ ہو گیا ہو قصور تو ہمارے اداروں کا ہے کہ ان کو پتہ تھا کہ یہ بندہ بھاگ سکتا ہے اس لیے اس پر نگاہ رکھیں اب یہ بندہ فاٹا میں جا سکتا ہے اس کے بعد افغانستان جا سکتا ہے اور پھر افغانستان سے لندن جا سکتا ہے یہ کوئی عجوبہ نہیں ہے سچ مچ میں لوگ بھاگ جاتے ہیں یہ کوئی نظریاتی لوگ نہیں ہیں کہ اپنی حکومت بچانے کے لیے تختہ دار پر چڑھ جائیں بھٹو صاحب تختہ دار پر چڑھے تھے گو کہ میں سمجھتا ہوں کہ وہ ہمارے اتنے اچھے لیڈر نہیں لیکن ان میں بہادری تھی اس وقت وہ ایک غلط فیصلہ تھا وہ صرف بھٹو کا قتل نہیں تھا انصاف کا قتل تھا مجھے خوشی ہے کہ ہماری عدلیہ کافی دھلتی جا رہی ہے اب حق نے دوسرا قدم لیا ہے پہلا جو نواز شریف کو نااہل کیا تھا لیکن ابھی بہت سفر باقی ہے -ابھی بہت لوگوں کو لانا ہے - ان میں بزنس مین بھی شامل ہیں دوسری پارٹیوں کے لوگ اور جن لوگوں نے بدعنوانی کی وہ ابھی باقی ہیں -"

متعلقہ خبریں