ترکی کا کردوں کیخلاف فاتحانہ مطالبہ

ترکی کا کردوں کیخلاف فاتحانہ مطالبہ

ترکی کا کردوں کیخلاف فاتحانہ مطالبہ 06 جون 2018 (04:39) 4:39 AM, June 06, 2018

استنبول : ترکی کے وزیر خارجہ مولود چاوش اوگلو کا کہنا ہے کہ امریکا کے ساتھ طے پائے گئے روڈمیپ کے تحت شمالی شام کے شہر منبج سے کوچ کے وقت کرد پیپلز پروٹیکشن یونٹس کے جنگجو اپنے ہتھیار چھوڑ کر جائیں گے۔

ترکی کے جنوبی صوبے انتالیہ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے اوگلو نے کہا کہ واشنگٹن میں امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کے ساتھ پیر کے روز جس روڈ میپ پر اتفاق رائے ہوا ہے اس پر آئندہ 10 روز کے دوران عمل درامد شروع ہو جائے گا۔ ترک وزیر خارجہ کے مطابق 6 ماہ کے عرصے میں یہ پایہ تکیمل تک پہنچ جائے گا۔

اوگلو کا کہنا تھا کہ مستقبل میں اس نمونے کا اطلاق رقّہ ، کوبانی اور شام کے دیگر علاقوں پر بھی ہونا چاہیے جہاں پیپلز پروٹیکشن یونٹس نے قبضہ کر رکھا ہے۔

ترک وزیر خارجہ کے مطابق امریکا نے کرد پیپلز پروٹیکشن یونٹس کو دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل کرنے کا کوئی عہد نہیں کیا۔ اوگلو نے یہ بھی کہا کہ منبج میں امریکا کے ساتھ ترکی کا تعاون کسی طور بھی شام کے حوالے سے روس کے ساتھ کام کرنے کا متبادل نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں