اسرائیل نے اپنے سابق وزیر کو ایران کے لیے جاسوسی کے الزام میں گرفتار کر لیا

اسرائیل نے اپنے سابق وزیر کو ایران کے لیے جاسوسی کے الزام میں گرفتار کر لیا

اسرائیل نے اپنے سابق وزیر کو ایران کے لیے جاسوسی کے الزام میں گرفتار کر لیا 06 جولائی 2018 (09:41) 9:41 AM, July 06, 2018

اسرائیل کے ایک سابق وزیر گونن سیگیف کے خلاف ایران کے لیے جاسوسی کے الزام میں مقدمے کی سماعت شروع ہوگئی ہے۔

ضرور پڑھیں:شفاف ٹرائل تک بھارت جانے کا کوئی ارادہ نہیں۔ ڈاکٹر ذاکر نائیک

ضرور پڑھیں:صدر رجب طیب ایردوان 9 جولائی بروز سوموار کو ترکی کی قومی اسمبلی میں حلف اٹھا کر صدارتی فرائض کا آغاز کر دیں گے

گونن سیگیف 1995 اور 1996ء میں اسرائیلی کابینہ میں توانائی اور انفرااسٹرکچر کے وزیر رہے تھے۔ان کے خلاف گذشتہ ماہ جنگ کے زمانے میں دشمن کو معلومات فراہم کرنے اور ریاستِ اسرائیل کے خلاف جاسوسی کے الزام میں فرد جُرم عاید کی گئی تھی۔تحقیقات سے یہ بات سامنے آئی تھی کہ انھوں نے ایران کی انٹیلی جنس کے لیے جاسوسی کی تھی اور ریاست اسرائیل کو نقصا ن پہنچانے کی کوشش کی تھی۔اسرائیل کی داخلی سکیورٹی کی ذمے دار ایجنسی شین بیت کے مطابق سابق وزیر نائیجیریا میں ایرانی سفار ت خانے سے رابطے میں رہے تھے۔وہ اس افریقی ملک میں بھی کچھ عرصہ مقیم رہے تھے ۔ بعد میں انھوں نے ایران کا سفر کیا تھا اور اپنے ساتھ رابطہ رکھنے والے ایرانی انٹیلی جنس کے ایجنٹ سے ملاقات کی تھی۔62 سالہ گونن سیگیف کے خلاف مقدمے کی بند کمرے میں سماعت کی جارہی ہے اور صحافیوں کو عدالت میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دی گئی۔انھیں مغربی افریقا کے ملک گنی میں داخلے کی اجازت نہ ملنے پر مئی میں اسرائیل واپسی پر گرفتار کر لیا گیا تھا۔

متعلقہ خبریں