بڑے بے آبرو ہوکر تیرے کوچے سے ہم نکلے۔فاروق بندیال تحریک انصاف سے باہر۔متاثرہ اداکاہ کا عمران خان کے حق میں ٹویٹ

بڑے بے آبرو ہوکر تیرے کوچے سے ہم نکلے۔فاروق بندیال تحریک انصاف سے باہر۔متاثرہ اداکاہ کا عمران خان کے حق میں ٹویٹ

بڑے بے آبرو ہوکر تیرے کوچے سے ہم نکلے۔فاروق بندیال تحریک انصاف سے ... 01 جون 2018 (15:29) 3:29 PM, June 01, 2018

اسلام آباد :پاکستان تحریک انصاف نے حال ہی پارٹی میں شامل ہونے والے ایک سیاست دان فاروق بندیال کو نکال باہر کیا ہے۔خوشاب سے تعلق رکھنے والے فاروق بندیال حال ہی میں تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان سے بنی گالہ میں ملے اور پی ٹی آئی میں شامل ہوگئے لیکن سوشل میڈیا پر ان کے خلاف ایک مہم چلی جس میں بتایا گیا کہ وہ ماضی کی معروف اداکارہ شبنم کے کے گھر پر ڈکیتی اور ان کےساتھ مبینہ طور پر جنسی زیادتی کے مجرم ہیں۔اس الزام کے بعد ملک بھر میں سوشل میڈیا پر ایک کہرام مچ گیا اور پاکستان تحریک انصاف کو ایک مجرم کو پارٹی میں شامل کرنے کے الزام کے ساتھ شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ بڑھتی ہوئی تنقید پر منگل کے روز پارٹی ترجمان فواد چوہدری نے معاملہ کی تحقیقات کے لیے نعیم الحق کو تحقیقات کے لیے مقرر کرنے کا اعلان کیا اور بدھ کے روز نعیم الحق نے ٹوئیٹ کرکے فاروق بندیال کو پارٹی سے نکالے جانے کی تصدیق کردی۔نعیم الحق نے کہا کہ تحریک انصاف نے مجرمانہ ریکارڈ ثابت ہونے پر فاروق بندیال کو پارٹی سے نکال دیا ہے۔ فاروق بندیا ل کا پارٹی میں شامل ہونا بدقسمتی تھی۔

سربراہ تحریک انصاف عمران خان کے فیصلے کو اداکارہ شبنم نے سراہتے ہوئے ان کا شکریہ ادا کیا اور اپنی ٹویٹ میں لکھا ، ’ میں جنسی زیادتی کے ایک مجرم کو پارٹی سے نکالنے پر عمران خان کے عمل کو سراہتی ہوں ساتھ ہی میں پاکستانی عوام کی بھی مشکور ہوں جو ایک ریپسٹ کے خلاف کھڑے ہوئے، جیتے رہیں۔‘سوشل میڈیا پرعوام کی جانب سے شدید تنقید کے بعد عمران خان نے نعیم الحق کو معاملے کی چھان بین کے احکامات دیئے اور فاروق بندیال کے جرم کی تصدیق کے بعد عمران خان نے انہیں فوری طور پر پارٹی سے نکال دیا۔خیال رہے کہ یہ معاملہ ’شبنم ڈکیتی‘ کیس کے نام سے بہت مقبول ہوا تھا۔اس ضمن میں سوشل میڈیا پر اکتوبر 1979ء کے ایک اخبار کا تراشا بھی زیر گردش ہے جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہفوجی عدالت نے شبنم ڈکیتی کیس کے پانچ مجرموں کو سزائے موت سنائی تھی۔

متعلقہ خبریں